16

پاکستان کا قرضے پر انحصار لیکن بھارت نے اپنی معیشت کو سہارا دینے کیلئے انتہائی مضحکہ خیز قدم اٹھانے کااعلان کردیا، پاکستانیوں کو بھی غصہ چڑھادیا

نئی دہلی (ویب ڈیسک) پاکستان نے اپنی معشیت کو سہارا دینے کے لیے مختلف ممالک اور آئی ایم ایف سے قرض لینے کا فیصلہ لیکن بھارت اپنا خسارہ پورا کرنے کے لیے پاک و ہند کی تقسیم کے دوران پاکستان اور چین ہجرت کرنیوالے شہریوں کی جائیدادیں نیلام کرنے کا اعلان کردیا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق کم ازکم 30 بلین روپے کے ایسے اثاثے ہیں جنہیں بھارت نے دشمن کی پراپرٹی قراردیا ہے ، یہ وہ جائیدادیں ہیں جو کبھی ان لوگوں کو ملکیت تھیں جو پاکستان اور چین چلے گئے جس کے لیے بھارت نے بھی جنگیں لڑیں۔ ایک دفعہ جب یہ لوگ ان ممالک کے شہری بن گئے تو ان سے دشمن جیسا ہی رویہ اپنایاجائےگا اوران کی زمین اور گھر قبضے میں لے لیے گئے ہیں۔

رپورٹس کے مطابق وزیراعظم نریندرا مودی دشمن کی پراپرٹیز سے متعلق قوانین مزید سخت کررہے ہیں حتیٰ کہ ان لوگوں کے لیے بھی قانون میں سختی کی جارہی ہے جو بھارت رہ گئے اور بھارتی شہری ہیں ، ان کے لیے بھی 1968 میں ترمیم کی جارہی ہے۔ مودی کی کابینہ نے جمعرات کو اس منصوبے کی منظوری دی جس کے تحت 20323 افراد کی ملکیت ان 996 کمپنیوں کو فروخت کیا جائے گا جو دشمن کا اثاثہ سمجھی جاتی ہیں۔ وزیر قانون روی شنکر پرساد نے کہا ہے کہ حکومت دشمن کا مال بیچ کر پیسہ اکٹھاکرے گی اور حاصل ہونیوالی رقم اپنے لوگوں کی فلاح و بہبود پر خرچ ہوگی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں