خادم رضوی اور ساتھیوں کو عمر قید کی سزا ہونے کا امکان!! دہشتگردی اور بغاوت کے مقدمات درج

اسلام آباد(ویب ڈیسک) وفاقی وزیراطلاعات ونشریات فواد حسین چودھری نے کہا ہے کہ تحریک لبیک کی قیادت کیخلاف بغاوت اور دہشتگردی کی دفعات کے تحت مقدمات درج کررہے ہیں، خادم رضوی کیخلاف تھانہ سول لائن، افضل قادری کوگجرات ،حافظ فاروق الحسن، عنایت الحق شاہ کیخلاف تھانہ روات میں مقدمہ درج کیا گیا ہے،

ان تمام کے کیسز دہشتگردی کی عدالتوں میں چلائے جائیں گے، ان تمام افراد کوعمر قید کی سزا ہوسکتی ہے۔نہوں نے آج یہاں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا کہ احتجاج قانونی اور آئینی حق ہے لیکن احتجاج کی آڑ میں لوگوں کی املاک کو نقصان پہنچانے اور لوگوں کے حقوق کو پامال نہیں کرنے دیں گے۔اسلام آباد اور راولپنڈی کے درمیان انٹرچینج کو احتجاج کی آڑ میں بند کردیا گیا۔تحریک لبیک کا احتجاج آئین پاکستان کیخلاف تھا۔ان کے طرزعمل نے ریاست کو للکارا۔ ان کے احتجاج سے قومی املاک کونقصان پہنچایا گیا۔حکومت نے ان کی لیڈرشپ کو بڑا سمجھایا کہ احتجاج قانون کے دائرے میں کریں گے۔انہوں نے کہا کہ ان تمام ہتھکنڈوں کو مدنظر رکھتے ہوئے ایک آپریشن لانچ کیا گیا ۔جس میں تمام اداروں نے حصہ لیا۔احتجاجی تحریک کیخلاف ریاستی اداروں کے ساتھ اپوزیشن جماعتیں بھی آن بورڈ تھیں ۔ان سب معاملات پر اپوزیشن جماعتوں اور میڈیا کے شکرگزار ہیں۔کیونکہ یہ معاملہ ریاست کا معاملہ تھا۔جرینل، ججز، سیاستدان یا دیگر کو مذاق بنادیا جائے تو پھر ریاست تونہیں چل سکتی۔ فواد چودھری نے کہا کہ حکومت نے احتجاجی پلان کے تحت پنجاب میں 2899افراد ،سندھ 139،اسلام آباد126لوگوں کو حفاظتی تحویل میں لیا گیا۔ان میں خادم حسین رضوی، افضل قادری اور دیگر بھی شامل ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہم نے واضح کیا تھا کہ احتجاج آئین کے دائرے میں ہوگا۔فواد چودھری نے کہا کہ تحریک لبیک کے رہنماؤں پر بغاوت اور دہشتگردی دفعات کے تحت مقدمات درج کررہے ہیں۔خادم رضوی کوبغاوت اور دہشتگردی کے جرم میں تھانہ سول لائن،افضل قادری کوگجرات ،عنایت الحق شاہ کیخلاف تھانہ روات راولپنڈی میں مقدمہ درج کرلیا گیا ہے اور حافظ فاروق الحسن پر مقدمہ درج کردیا گیا ہے۔ان تمام کے کیسز دہشتگردی کی عدالتوں میں چلائے جائیں گے۔ان تمام افراد کوعمر قید کی سزا ہوسکتی ہے۔فواد چودھری نے بتایا کہ اسی طرح وہ تمام لوگ جنہوں نے لوگوں کی املاک کونقصان پہنچایا، آگ لگائی، 5کروڑ کے لگ بھگ املاک کونقصان پہنچا، خواتین کے پرس چھینے گئے ۔ان تمام لوگوں کیخلاف بھی مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔جبکہ ایسے تمام افراد جوملوث نہیں تھے لیکن انہوں نے تماشا دیکھا اور وہاں پر موجود تھے ان کے خاندان سے سرٹیفکیٹ لیے جائیں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں