یار اتنی بھی جلدی کیا ہے؟ کر لیں گے ایران پر حملہ لیکن ابھی نہیں ۔۔۔ دو روز قبل ایران کے خلاف جنگ کا حکم دینے والے ڈونلڈ ٹرمپ اتنے ٹھنڈے کیسے ہوگئے ؟

" >

واشنگٹن(ویب ڈیسک) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ ایران کے خلاف کارروائی میں کوئی جلدی نہیں ہے۔عرب ٹی وی کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا سوشل میڈیا پر پیغام میں کہنا تھا کہ ایران کے خلاف کارروائی کی ہمیں کوئی جلدی نہیں، ان کے خلاف نئی پابندیاں عائد کی گئی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایران کے تین عسکری تنصیبات پر حملے کے لیے مکمل تیاری کرلی گئی تھی لیکن جوابی فوجی کارروائی دس منٹ قبل رکوائی، اگر ایران کی عسکری تنصیبات پر جوابی حملہ کرتے تو کم از کم 150 شہریوں کی ہلاکت کا خدشہ ہوتا۔ان کا کہنا ہے کہ ڈرون طیارے مار گرانے کے لحاظ سے فوجی کارروائی مناسب نہیں سمجھی، ایران کو جوہری ہتھیار ہرگز حاصل نہیں کرنے دیں گے۔قبل ازیں غیر ملکی میڈیا کے مطابق وائٹ ہاؤس کے سینئر حکام نے بتایا کہ قریبی ہدف کو نشانہ بنانا کے لیے حملے کی تیار کی گئی تھی اور اس حوالے سے پہلے ہی آپریشن اپنے ابتدائی مراحل میں جاری ہے جس کے تحت بحری بیڑے اور جیٹ طیارے اپنی پوزیشن سنبھالے ہوئے ہیںوائٹ ہاؤس حکام کا کہنا ہےکہ جمعہ کی صبح سے پہلے ایران پر حملے کی تیاری کرلی گئی تھی تاہم عسکری حکام کو عارضی طور پر حملہ روکنے کا حکم جاری کیا گیا۔غیر ملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق امریکی صدر ٹرمپ نے وائٹ ہاؤس میں قومی سلامتی کے اعلیٰ حکام، کانگریس رہنما اور دیگر سینئر حکام سے میٹنگ کی جس میں صدر کو بریفنگ دی گئی، اعلیٰ سطح کی میٹنگ کے بعد امریکی عسکری اور سفارتی حکام جمعرات کی شام کو ایران پر حملے کی توقع کررہے تھے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق ٹرمپ نے پہلے ایران میں ریڈار اور میزائل بیٹریز جیسے کچھ اہداف کو نشانہ بنانے کی منظور دی تاہم اس منظوری کو تھوڑی ہی دیر بعد واپس لے لیا گیا، جبکہ خود ٹرمپ کی جانب سے بھی کسی قسم کا کوئی رد عمل نہیں دیا گیا۔